Do mulk ke taluq دو ملک کے تعلق

ایک لکیر کی وجہ سے

دو ملکوں کی ام اوم بھیچارے میں کبھی نہیں  رہے
زبان ایک ہی اور تہذیب ایک
بس نفرتوں سے بھری تھی ہر کہیں

نہ جانے کتنے اور برس بہ جاینگے یہ احساس ہونے
کی ہمارا خون بھی ایک اور خیال بھی ایک ہی رہے
بس ایک بار محبّت سے ذرا دیکھو
کیا پتا تمہارے دشمن میں بھی تمہے خدا دیکھ جائے

ek lakir ki wajah se 

do mulkon ki aam awam bhaicharey main kabhi nahi rahey 

zaban ek hi aur tehzeeb ek

bas nafraton se bhari thi har kahin 

 

na jaane kitne aur baras beh jayenge ye ehsaas hone

ki hamara khoon bhi ek aur khiyal bhi ek hi rahe

bas ek bar muhabbat se zara dekho 

kya pata tumhare dushman main bhi tumhe khuda dikh jaye 

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s